ریاست جموں و کشمیر الحاق کے قانونی معاہدے سے آزاد ہو چکی ہے

زاہد قریشی (واشنگٹن ڈی سی)
ﺗﻘﺴﯿﻢِ ﺑﺮﺻﻐﯿﺮ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺟﻤﻮﮞ ﻭ ﮐﺸﻤﯿﺮ ﮐﮯ ﺣﮑﻤﺮﺍﻥ مہاﺭﺍﺟﮧ ﮨﺮﯼ ﺳﻨﮕﮫ ﻧﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺗﻮ ﺧﻮﺩﻣﺨﺘﺎﺭ ﺭﮨﻨﮯ ﮐﺎ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮐﯿﺎ ﺗﺎﮨﻢ ﺑﻌﺪﺍﺯﺍﮞ بھارت کی جانب سے متعدد مراعات کے وعدے پر ﻣﺸﺮﻭﻁ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﻧﮉﯾﺎ ﺳﮯ ﺍﻟﺤﺎﻕ ﭘﺮ ﺁﻣﺎﺩﮔﯽ ﻇﺎﮨﺮ کر دی۔
ﺍسی ﺻﻮﺭﺗﺤﺎﻝ کے تناظر ﻣﯿﮟ ﺍﻧﮉﯾﺎ ﮐﮯ ﺁﺋﯿﻦ ﻣﯿﮟ بھارتی وزیراعظم اور کشمیری قیادت کے مابین گفت و شنید کے بعد ﺷﻖ 370 ﮐﻮ ﺷﺎﻣﻞ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ تھا ﺟﺲ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ریاست ﺟﻤﻮﮞ ﻭ ﮐﺸﻤﯿﺮ ﮐﻮ ﺧﺼﻮﺻﯽ ﺩﺭﺟﮧ ﺍﻭﺭ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭﺍﺕ ﺩﯾﮯ ﮔﺌﮯ ﺗﺎﮨﻢ ﺭﯾﺎﺳﺖ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﺳﮯ ﻋﻠﯿﺤﺪﮦ ﺁﺋﯿﻦ ﮐﺎ ﺑﮭﯽ ﻣﻄﺎﻟﺒﮧ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﺟﺲ ﭘﺮ ﺳﻨﮧ1951 ﻣﯿﮟ ﺭﯾﺎﺳﺘﯽ ﺁﺋﯿﻦ ﺳﺎﺯ ﺍﺳﻤﺒﻠﯽ ﮐﮯ ﻗﯿﺎﻡ ﮐﯽ ﺍﺟﺎﺯﺕ ﺑﮭﯽ ﺩﮮ ﺩﯼﮔﺌﯽ۔
ﺍﻧﮉﯾﻦ ﺁﺋﯿﻦ ﮐﯽ ﺷﻖ 370 ﻋﺒﻮﺭﯼ ﺍﻧﺘﻈﺎﻣﯽ ﮈﮬﺎﻧﭽﮯ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ تھی ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﻣﺮﮐﺰ ﺍﻭﺭ ﺭﯾﺎﺳﺖِ ﺟﻤﻮﮞ ﻭ ﮐﺸﻤﯿﺮ ﮐﮯ الحاق ﮐﮯ ﺧﺪﻭﺧﺎﻝ ﮐﺎ ﺗﻌﯿﻦ اور ریاست اور مرکز کے مابین ورکنگ ریلیشن شپ کے لیے فریم ورک مہیا ﮐﺮتی ﺗھی۔
ﯾﮧ ﺁﺭﭨﯿﮑﻞ ﺭﯾﺎﺳﺖ ﺟﻤﻮﮞ ﻭ ﮐﺸﻤﯿﺮ ﮐﻮ ﺍﻧﮉﯾﻦ ﯾﻮﻧﯿﻦ ﻣﯿﮟ ﺧﺼﻮﺻﯽ ﻧﯿﻢ ﺧﻮﺩﻣﺨﺘﺎﺭﺣﯿﺜﯿﺖ کا درجہ ﺩﯾﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺭﯾﺎﺳﺖ ﺟﻤﻮﮞ ﻭ ﮐﺸﻤﯿﺮ ﮐﮯ ﻭﺯﯾﺮﺍﻋلیٰ ﺷﯿﺦ ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮉﯾﻦ ﻭﺯﯾﺮﺍﻋﻈﻢ ﺟﻮﺍﮨﺮ ﻟﻌﻞ ﻧﮩﺮﻭ کے مابین ﭘﺎﻧﭻ ﻣﺎﮦ ﮐﯽ ﻣﺸﺎﻭﺭﺕ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﺳﮯ بھارتی ﺁﺋﯿﻦ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﻣﻞ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔
ﺍﺱ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﺭﯾﺎﺳﺖ ﺟﻤﻮﮞ ﻭ ﮐﺸﻤﯿﺮ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﺧﺎﺹ ﻣﻘﺎﻡ ﺣﺎﺻﻞ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮉﯾﺎ ﮐﮯ ﺁﺋﯿﻦ ﮐﯽ ﺟﻮ ﺩﻓﻌﺎﺕ ﺩﯾﮕﺮ ﺭﯾﺎﺳﺘﻮﮞ ﭘﺮ ﻻﮔﻮ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﺍﺱ ﺁﺭﭨﯿﮑﻞ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺍﻃﻼﻕ ﺭﯾﺎﺳﺖ ﺟﻤﻮﮞ ﻭ ﮐﺸﻤﯿﺮ ﭘﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ ﺗﮭﺎ بلکہ اسے ﺍﭘﻨﺎ ﺁﺋﯿﻦ ﺑﻨﺎﻧﮯ، ﺍﻟﮓ ﭘﺮﭼﻢ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﮐﺎ ﺣﻖ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﺟﺒﮑﮧ ﺍﻧﮉﯾﺎ ﮐﮯ ﺻﺪﺭ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺭﯾﺎﺳﺖ ﮐﺎ ﺁﺋﯿﻦ ﻣﻌﻄﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﺣﻖ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ۔
ﺍﺱ ﺁﺭﭨﯿﮑﻞ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﺩﻓﺎﻉ، ﻣﻮﺍﺻﻼﺕ ﺍﻭﺭ ﺧﺎﺭﺟﮧ ﺍﻣﻮﺭ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﮐﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﻌﺎﻣﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﻣﺮﮐﺰﯼ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﯾﺎ ﭘﺎﺭﻟﯿﻤﺎﻥ ﺭﯾﺎﺳﺖ ﻣﯿﮟ ﺭﯾﺎﺳﺘﯽ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﮐﯽ ﺗﻮﺛﯿﻖ ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﺍﻧﮉﯾﻦ ﻗﻮﺍﻧﯿﻦ ﮐﺎ ﺍﻃﻼﻕ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﯽ ﺗﮭﯽ۔
ﺑﮭﺎﺭﺗﯽ ﺁﺋﯿﻦ ﮐﮯ ﺁﺭﭨﯿﮑﻞ 360 ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﻭﻓﺎﻗﯽ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﮐﺴﯽ ﺭﯾﺎﺳﺖ ﻣﯿﮟ ﯾﺎ ﭘﻮﺭﮮ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟ ﻣﺎﻟﯿﺎﺗﯽ ﺍﯾﻤﺮﺟﻨﺴﯽ ﻧﺎﻓﺬ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ ﺗﺎﮨﻢ ﺁﺭﭨﯿﮑﻞ 370 ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﺍﻧﮉﯾﻦ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﮐﻮ ریاست ﺟﻤﻮﮞ ﻭ ﮐﺸﻤﯿﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﺍﻗﺪﺍﻡ ﮐﯽ ﺍﺟﺎﺯﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﯽ۔
ﺍﻧﮉﯾﺎ ﮐﮯ ﺁﺋﯿﻦ ﻣﯿﮟ ﺟﻤﻮﮞ ﻭ ﮐﺸﻤﯿﺮ ﮐﯽ ﺧﺼﻮﺻﯽ ﺷﮩﺮﯾﺖ ﮐﮯ ﺣﻖ ﺳﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﺩﻓﻌﮧ 35A ﮐﺎ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﮐﺸﻤﯿﺮ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﭘﺮﺍﻧﺎ ﮨﮯ، ﺍﺱ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﮐﯽ ﺭُﻭ ﺳﮯ ﺟﻤﻮﮞ ﮐﺸﻤﯿﺮ ﮐﯽ ﺣﺪﻭﺩ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﻋﻼﻗﮯ ﮐﺎ ﺷﮩﺮﯼ ﺭﯾﺎﺳﺖ ﻣﯿﮟ ﻏﯿﺮﻣﻨﻘﻮﻟﮧ ﺟﺎﺋﯿﺪﺍﺩ ﮐﺎ ﻣﺎﻟﮏ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻦ ﺳﮑﺘﺎ، ﯾﮩﺎﮞ ﻧﻮﮐﺮﯼ ﺣﺎﺻﻞ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺳﮑﺘﺎ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮐﺸﻤﯿﺮ ﻣﯿﮟ ﺁﺯﺍﺩﺍﻧﮧ ﻃﻮﺭ ﺳﺮﻣﺎﯾﮧ ﮐﺎﺭﯼ ﮐﺮﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔
ﯾﮧ ﻗﻮﺍﻧﯿﻦ ﮈﻭﮔﺮﮦ راج کے زمانے میں مہاراجہ جموں و کشمیر نے ﺳﻨﮧ 1927 ﺳﮯ 1932 ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﻣﺮﺗﺐ ﮐﯿﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮨﯽ ﻗﻮﺍﻧﯿﻦ ﮐﻮ ﺳﻨﮧ 1954 ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺻﺪﺍﺭﺗﯽ ﺣﮑﻤﻨﺎﻣﮯ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮧ ہند کے ﺁﺋﯿﻦ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﻣﻞ ﮐﺮ ﻟﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔
ﮐﺸﻤﯿﺮﯾﻮﮞ ﮐﻮ ﺧﺪﺷﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺁﺋﯿﻦِ ﮨﻨﺪ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ان کے حقوق کی محافظ ﯾﮧ ﺣﻔﺎﻇﺘﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﮔﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻧﺘﯿﺠﮯ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﻓﻠﺴﻄﯿﻨﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺑﮯ ﻭﻃﻦ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ، ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻏﯿﺮ ﻣﺴﻠﻢ ﺁﺑﺎﺩﮐﺎﺭﻭﮞ ﮐﯽ ﮐﺸﻤﯿﺮ ﺁﻣﺪ ﮐﮯ ﻧﺘﯿﺠﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺯﻣﯿﻨﻮﮞ، ﻭﺳﺎﺋﻞ ﺍﻭﺭ ﺭﻭﺯﮔﺎﺭ ﭘﺮ ﻗﺒﻀﮧ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ اور مودی حکومت کی مسلم دشمن اور انتہاپسندانہ پالیسیوں کی وجہ سے ان کا یہ خدشہ بے بنیاد بھی نہیں۔ ﯾﮧ ﺧﺪﺷﮧ ﺻﺮﻑ ﮐﺸﻤﯿﺮ ﮐﮯ ﻋﻠﯿﺤﺪﮔﯽ ﭘﺴﻨﺪ ﺣﻠﻘﻮﮞ ﺗﮏ ﻣﺤﺪﻭﺩ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﮨﻨﺪ ﻧﻮﺍﺯ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﺣﻠﻘﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﺩﻓﻌﮧ ﮐﮯ ﺑﭽﺎﺅ ﻣﯿﮟ ہمیشہ ﭘﯿﺶ ﭘﯿﺶ ﺭﮨﮯ ہیں۔
سب سے اہم بات جس بنیاد اور جن اصولوں پر ریاست جموں کشمیر کا بھارت سے الحاق ہوا تھا ان دو آرٹیکلز کی بھارتی آئین سے یکطرفہ منسوخی کے بعد وہ بنیاد اور رھنما اصول ساقط ہو گئے اور ریاست جموں و کشمیر بھی الحاق کے قانونی معاہدے سے آزاد ہو چکی ہے اور اب اس الحاق کی ریاست پر غیر قانونی بھارتی قبضے سے زیادہ کوئی حیثیت نہیں ہے۔اور یہ وہ نقطہ ہے جسے کشمیری عوام اور پاکستانی حکومت کو بھارت کے خلاف ہر فورم پر شدومد سے اٹھانا اور دنیا کو باور کرانا ہے۔

Show More
Back to top button