لڑکوں کی طرح ٹریک سوٹ میں کیوں کھیلتی ہو؟

 

خالدہ نیاز سے

،،میرے خاندان والے اس بات سے نالاں ہیں کہ میں ٹیبل ٹینس کیوں کھیلتی ہوں، باہر کیوں جاتی ہوں؟ وہ کہتے ہیں کہ لڑکی ہو کیوں ٹریک سوٹ میں باہر جاتی ہو اور لڑکوں کی طرح کھیلتی ہو لیکن میں انکی باتوں کی بالکل بھی پروا نہیں کرتی کیونکہ میرے ساتھ میرے ماں باپ کھڑے ہیں اور وہ مجھے سپورٹ کررہے ہیں،،

ان خیالات کا اظہار پشاور سے تعلق رکھنے والی 12 سالہ ٹیبل ٹینس کھلاڑی علیشبہ نے ٹی این این کے ساتھ خصوصی انٹرویو کے دوران کیا۔ علیشبہ آٹھویں جماعت میں پڑھتی ہے اور انکو بچپن سے ہی سپورٹس سے لگاؤ ہے تاہم علیشبہ نے ٹیبل ٹینس کھیلنے کا باقاعدہ آغاز ایک سال قبل کیا۔

ٹی این این کے ساتھ بات چیت کے دوران عیلشبہ نے کہا کہ وہ صرف اپنے پریکٹس اور تعلیم پر توجہ دیتی ہے کیونکہ اگر اس نے لوگوں کی باتوں پر دھیان دیا تو حوصلہ ہارجائے گی اور شاید وہ نہ کرپائیں جو وہ کرنا چاہتی ہے۔

اس سوال کے جواب میں کہ پڑھائی کے ساتھ ساتھ ٹیبل ٹینس کو کسطرح وقت دیتی ہے علییشبہ نے کہا کہ وہ روزانہ سکول سے دوبجے تک فارغ ہوتی ہے اور اس کے بعد 3 سے 6 بجے تک پریکٹس کرتی ہے اور اس کے ساتھ ساتھ وہ اپںی پڑھائی کو بھی توجہ دیتی ہے۔ ،، میں سکول کے بعد دو گھنٹے پڑھائی کو دیتی ہوں اور ٹاپ فائیو میں آتی ہوں،،

علیشبہ کے مطابق ابھی وہ مختلف ایونٹس میں 11 تمغے اور 3 میڈلز جیت چکی ہے اور وہ نیشنل جونیئرلیول پربھی کھیل چکی ہے جس میں اسکی تیسری پوزیشن آئی تھی۔ علیشبہ نے ٹی این این کو بتایا کہ وہ ابھی تک چارسدہ، ایبٹ آباد، ڈیرہ اسماعیل خان اور صوابی جاچکی ہے۔

،، ابھی میری چائنہ کے لئے انتخاب ہوا ہے جس کے لئے میں بہت پرجوش ہوں اور بہت خوش ہوں کیونکہ یہ میرے لئے اور میرے ماں باپ کے لئے اعزاز کی بات ہے، وہاں ہم تین مہینے گزاریں گے، میرا انتخاب مقابلے کے بعد ہوا ہے 5 میچز تھے جس میں سے دو جیتنا ضروری تھے لیکن میں نے چار میچز جیتے اور صرف ایک میں شکست کھائی،،

علیشبہ کہتی ہے کہ لڑکیوں کو بھی کھیل کی طرف آنا چاہیئے کیونکہ صرف ایک مرتبہ گھر سے نکلنا مشکل ہوتا ہے پر راستے خود بخود نکلتے جاتے ہیں اور ہرانسان کو منزل کی طرف جانے کا راستہ مل جاتا ہے لیکن اس کے لئے گھر والوں اور ماں باپ کی مدد بہت ضروری ہے۔ ،، میرے ساتھ ماں باپ بہت مدد کرتے ہیں، وہ میری خوراک، ٹریک سوٹس اور سب چیزوں کا بہت خیال رکھتے ہیں،،

علیشبہ نے یہ بھی کہا کہ جب بھی وہ کوئی ٹرافی یا میڈل لاتی ہے تو مخالفین بھی اسکی تعریفیں کرنے پرمجبور ہوجاتے ہیں لیکن اس کے باوجود ہمارے معاشرے میں ایک لڑکی کے لئے بہت مشکل ہے کہ وہ گھرسے باہرنکل کرکھیلوں میں حصہ لے اور پریکٹس کرے۔

علیشبہ نے باقی لڑکیوں کو پیغام دیتے ہوئے کہا ہے وہ بھی اپنے خوابوں کو پورہ کرنے کے لئے باہرنکلیں کیونکہ لڑکیوں میں بھی بہت ٹیلنٹ ہے وہ بھی وہ سب کچھ کرسکتی ہے۔

Make Money with 1xBet
Show More
Back to top button