غیر قانونی اثاثے بنانے کے الزام میں دو اعلیٰ افسران گرفتار

قومی احتساب بیورو (نیب) خیبر پختونخوا نے ڈیڑھ ارب روپے کے غیر قانونی اثاثے بنانے کےالزام میں سابق ایڈیشنل انسپکٹر جنرل ٹریفک پولیس اور ہاوسنگ سیکرٹری کو گرفتار کرلیا ہے۔ نیب کی جانب سے گرفتار کئے گئے سابق اے آئی  جی ظفر اللہ اور سابق سیکرٹری ذکی اللہ پر الزام ہے کہ انہوں نے اعلیٰ عہدوں کا استعمال کرکے غیر قانونی اثاثے بنائے ہیں جس میں حیات آباد‘ ایبٹ آباد ‘ شامی روڈ پشاور اور مری سمیت اسلام آباد کے جدید علاقوں میں ڈیڑھ ارب روپے مالیت کے بنگلے ‘ ہوٹلز اورپلاٹس شامل ہیں۔ نیب کے اسسٹنٹ ڈائریکٹر سلمی بیگم کے مطابق دونوں ملزمان کے بارے میں کافی شکایات سامنے آئی تھیں جس پرآج نیب نے دونوں کو گرفتار کرلیا جنہیں آج عدالت میں پیش کیا جائےگا۔

Show More
Back to top button