پاکستانی طلبا کا 2 اساتذہ کے ہمراہ تحقیق کیلئے امریکہ روانگی

امریکی اور پاکستانی حکام نے ایک تقریب میں 33 پاکستانی طالبعلموں اور ان کے ہمراہ دو اساتذہ سے ملاقات کی جو عنقریب امریکہ کی ایریزونا اسٹیٹ یونیورسٹی اور اوریگن اسٹیٹ یونیورسٹی میں ایک سمیسٹر تحقیق کی غرض سے گزاریں گے۔ امریکی ادارہ برائے بین الاقوامی ترقی (یو ایس ایڈ) کی مالی اعانت سے چلنے والے اس تبادلہ پروگرام کے دوران شرکاء پاکستان کو درپیش توانائی کے سنگین بحران سے متعلق تحقیق کرینگے۔

          اس پروگرام کے تحت آئندہ چار برس کے دوران تقریباً 200 پاکستانی طلبا وطالبات  اور اساتذہ امریکی جامعات میں امریکہ میں ایک سمیسٹر گزاریں گے۔ اساتذہ کو درس  وتدریس کی مہارتوں کو بہتر بنانے اوراساتذہ اور  کارپوریٹ شعبہ کے مابین کامیاب اشتراک کار کے متعلق جاننے کا موقع ملے گاجبکہ طلبہ وطالبات تحقیق اور صنعت سے متعلق جدید آگہی پر توجہ مرکوز کریں گے۔

        یو ایس ایڈ کے ڈپٹی مشن ڈائریکٹر جیمز پیٹرز نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے  کہا کہ یوایس ایڈ کو توقع ہے کہ ان میں سے ہر ایک سینٹر فار ایڈوانسڈ سٹڈیز ایک نجی و سرکاری اشتراک کار اور نیٹ ورک تیار کرینگے  جوشعبہ تعلیم، حکومت، تاجر برادری میں ذہین افرا د کو یکجا کر کے جدت،مسابقتی اور معاشی ترقی کیلئے کام کریں گے ۔یہ مراکز خواتین اور پسماندہ پس منظر کے حامل نوجوانوں کو انجینئرنگ کے شعبے میں کامیابی میں معاونت کے لئے بھی نئے معیارقائم کریں گے ۔

        توقع ہے کہ ہائیر ایجوکیشن کمیشن کے تحت نیشنل یونیورسٹی آف سائنس اینڈ ٹیکنالوجی  اور یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی پشاور میں قائم امریکہ، پاکستان سینٹرز فار ایڈوانسڈ اسٹڈیز    دیرپا توانائی کے شعبے میں پاکستان کے سرکردہ تحقیقی مراکز بن کر ابھریں گے۔

Show More
Back to top button