"محسن داوڑ اور علی وزیر کے پروڈکشن آرڈر جاری کرنا میرے بس کی بات نہیں”

سپیکر قومی اسمبلی نے وزیرستان سے منتخب ارکان محسن داوڑ اور علی وزیر کے پروڈکشن آرڈر جاری کرنے سے معذرت کرلی۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق پیپلزپارٹی کے رہنماؤں پرویز اشرف اور خورشید شاہ نے میگا کرپشن سکینڈل میں گرفتار سابق صدر آصف علی زرداری کے پروڈکشن آرڈر کے معاملے کے لیے سپیکر قومی اسمبلی اسدقیصر سے رابطہ کیا۔

واضح رہے کہ قانون کے تحت پاکستان میں کوئی بھی رکن پارلیمنٹ گرفتار ہوتا ہے تو سپیکر کو مکمل اختیار حاصل ہے کہ پولیس یا جیل حکام کو حکم دے کر اس کو پارلیمنٹ کے اجلاس میں بلائیں۔

پیپلزپارٹی کے وفد نے رکن قومی اسمبلی آصف زرداری کے ساتھ ساتھ محسن داوڑ اور علی وزیر کے پروڈکشن آرڈر جاری کرنے پر بھی اصرار کیا۔

وفد نے اسد قیصر سے سوال کیا کہ اس سے قبل وہ شہباز شریف اور خواجہ سعد رفیق کے بھی پروڈکشن آرڈرز جاری کرچکے ہیں تو محسن داوڑ اور علی وزیر کے معاملے پر اسد قیصر نے پروڈکشن آرڈرز جاری کیوں نہیں کیے۔

پیپلز پارٹی کے وفد کے سوال پر اسد قیصر نے بے بسی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ محسن داوڑ اور علی وزیر کے پروڈکشن آرڈر جاری کرنا میرے بس کی بات نہیں۔

یہ بھی خیال رہے کہ آصف زرداری کو قومی احستاب بیورو (نیب) نے مبینہ منی لانڈرنگ کیس میں گزشتہ روز اسلام آباد سے گرفتار کیا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ سپیکر قومی اسمبلی نے آصف زرداری کے پروڈکشن آرڈر جاری کرنے پر آمادگی ظاہر کی تاہم محسن داوڑ اور علی وزیر کے پروڈکشن آرڈر کے معاملے پر بے بسی کا اظہار کیا۔

سپیکر نے انہیں یقین دہانی کراتے ہوئے کہا کہ آصف زرداری کے پروڈکشن آرڈر اگلے ہفتے جاری کیے جائیں گے۔

یاد رہے کہ 26 مئی 2019 کو شمالی وزیرستان کے علاقے بویا میں خڑکمر چیک پوسٹ پر حملہ کیا گیا تھا پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ کے مطابق محسن جاوید داوڑ اور علی وزیر جس کی قیادت کررہے تھے۔

حملے کے نتیجے میں ایک اہلکار شہید، 5 زخمی جبکہ 3 سویلین بھی کام آئے تھے بعض ذرائع جس کی تعداد زیادہ بتاتے ہیں۔

علی وزیر اپنے آٹھ ساتھیوں سمیت موقع پر حراست میں لیے گئے تھے جبکہ محسن داوڑ کی گرفتاری چند روز بعد عمل میں لائی گئی تھی۔

دونوں رہنماؤں کو انسداد دہشت گردی عدالت بنوں میں پیش کیا گیا جہاں سے انہیں سی ٹی ڈی کے حوالے کیا گیا جبکہ فی الحال دونوں رہنماء جوڈیشل ریمانڈ پر سنٹرل جیل میں ہیں۔

Make Money with 1xBet
Show More
Back to top button