وزیر اعظم 48 دن بعد وطن واپس پہنچے

 تیرہ  اپریل 2016ء کو وزیر اعظم نواز شریف طبی معائنے کے لئے لندن پہنچے تھے۔ ان کی بیماری اور علاج سے متعلق معلومات کا اہم ذریعہ مریم نواز بنیں۔ ٹویٹ کیا کہ ڈاکٹرز نے اوپن ہارٹ سرجری کا فیصلہ کیا ہے۔ سرجری سے پہلے وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف اور شریف خاندان کے افراد بھی لندن پہنچ گئے۔

وزیر اعظم نواز شریف کی وطن میں غیرموجودگی میں اپوزیشن نے سوال اٹھایا کہ بجٹ کی منظوری کون دے گا؟ جس کا جواب ویڈیو لنک پر کابینہ اجلاس کی سربراہی کرکے ای سائن کے ذریعے دیا گیا۔ 31 مئی 2016ء کو لندن کی ہارلے اسٹریٹ کلینک میں وزیر اعظم نواز شریف کے دل کی پیوند کاری کی گئی۔ تین سرجنوں نے پانچ گھنٹے تک آپریشن کیا۔ مریم نواز نے ٹویٹ کیا کہ کامیاب آپریشن کے بعد وزیر اعظم کو آئی سی یو منتقل کر دیا گیا ہے۔

سات جون کو نواز شریف لندن میں واقع اپنے گھر منتقل ہو گئے۔ کچھ روز بیڈ ریسٹ کے بعد انہوں نے معمول کی سرگرمیاں شروع کر دیں۔ پارک میں واک  کی، ریستوران میں کھانا کھایا اور شاپنگ کرنے بھی گئے۔ وزیر اعظم کل 48 دن بعد پاکستان پہنچے اور اپنے اہل عیال سے ملے جس کے بعد سے ان کے سیاسی امرا کی ملاقاتوں کا سلسلہ جاری ہے جبکہ اپوزیشن نے پاناما لیکس کے ایشو پر احتجاج کی تیاریا مکمل کرلی ہیں۔

Show More
Back to top button