وزیراعظم کا دورہ طورخم، تیاریاں زور و شور سے جاری

وزیر اعظم پاکستان عمران خان کا دورہ طورخم بارڈر 14ستمبر کو متوقع ہے جس کے لئے سول انتظامیہ اور سیکیورٹی فورسز نے تمام تر تیاریاں زور و شور سے جاری رکھی ہوئی ہیں۔

اس حوالے سے سول انتظامیہ نے طورخم بارڈر پر قائم پی ٹی ڈی سی پاکستان ٹورزم ڈیپارٹمنٹ کارپوریشن کی عمارت کو پاک افغان میڈیکل ریفرل ہیلتھ سنٹر میں تبدیل کر دیا ہے جس کی تزئین و آرائش پر تیزی سے کام جاری ہے۔

نمائندہ ٹی این این کے مطابق اسسٹنٹ کمشنر لنڈی کوتل محمد عمران خان اور طورخم کے نائب تحصیلدار شکیل برکی اس بارڈر ہیلتھ سنٹر پر کام کی دن رات نگرانی کر رہے ہیں، دو دن پہلے ڈپٹی کمشنر خیبر محمود اسلم وزیر نے بھی اس ہیلتھ سنٹر کا معائنہ کیا جبکہ ڈائریکٹر ہیلتھ سروسز قبائلی اضلاع ڈاکٹر شاہ فیصل نے بھی اپنی ٹیم کے ہمراہ پاک افغان میڈیکل ریفرل سنٹر کے مختلف حصوں کا معائنہ کیا۔

ڈائریکٹر ہیلتھ ڈاکٹر شاہ فیصل اور اسسٹنٹ کمشنر لنڈی کوتل محمد عمران کے مطابق اس ہیلتھ سنٹر کے لئے دو میڈیکل آفیسرز, ایک نرس اور مختلف ٹیکنیشنز کی تعیناتی کی منظوری دے دی گئی ہے جو کہ دن رات طورخم بارڈر پر مریضوں کے فرسٹ ایڈ اور چھوٹے موٹے علاج کے لئے موجود رہینگے۔

سرکاری ذرائع کے مطابق اس ہیلتھ سنٹر کے قیام پر لاکھوں روپے کے اخراجات آئے ہیں۔

سرکاری ذرائع نے بتایا کہ وزیر اعظم پاکستان عمران خان اور افغان صدر اشرف غنی دورہ طورخم کے موقع پر اس ہیلتھ سنٹر کا معائنہ کرینگے۔

حکام کے مطابق اس ہیلتھ سنٹر کے قیام سے پاک افغان بارڈر پر آنے والے مسافروں اور ٹرانسپورٹروں کے فوری اور عارضی علاج معالجے کی سہولت فراہم ہوں گی، یہ ہیلتھ سنٹر زیرو پوائنٹ پر قائم کیا گیا ہے جو کہ اس سے پہلے پی ٹی ڈی سی کے طور پر استعمال ہوتا رہا، بعد میں ناکارہ ہونے کی وجہ سے عمارت کی حالت خراب ہوگئی اور اس میں مختلف قسم کے دفاتر قائم تھے۔

ڈائریکٹر ہیلتھ سروسز ڈاکٹر شاہ فیصل کے مطابق اس میں مکمل سٹاف موجود ہوگا اور مختلف بیماریوں کے ٹسٹ ہو سکیں گے۔

واضح ریے کہ اس پاک افغان بارڈر میڈیکل ریفرل ہیلتھ سنٹر سے تھوڑے فاصلے پر ایک اور ہیلتھ سنٹر بھی موجود ہے۔

Make Money with 1xBet
Show More
Back to top button