وانا: ڈاکٹر کے اغوا کے بعد آج سرکاری اور نجی ہسپتال بند

 

جنوبی وزیرستان وانا سے گزشتہ روز اغوا کیا گیا ڈاکٹر نور حنان تاحال بازیاب نہ ہوسکا۔ ڈاکٹر نورحنان کے اغوا کے خلاف ڈاکٹرز نے ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹرہسپتال وانا سمیت سرکاری اور نجی ہسپتالوں میں آج ڈیوٹی سے بائیکاٹ کیا ہے۔

ڈاکٹرز ایسوسی ایشن نے مطالبہ کیا ہے کہ ڈاکٹر نور حنان کو فوری طور پر رہا کیا جائے اور ڈاکٹرز کو تحفظ فراہم کیا جائے۔ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن کے مطابق ڈاکٹر نورحنان کی بازیابی تک احتجاج جاری رہے گا اور ایمرجنسی کے علاوہ تمام شعبے بند رہیں گے۔

دوسری جانب اسسٹنٹ کمشنر وانا امیر نواز خان نے تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ بدھ کو دوپہر کے وقت 5 مسلح نقاب پوش ٹی بی ہسپتال وانا کے اندر داخل ہوگئے۔ سرکاری ہسپتال کے عملے کو ایک کمرے میں بند کر کے ڈاکٹر نورحنان کے آفس میں داخل ہو گئے اور موصوف کو بندوق کی نوک پر اغواء کیا۔

اسسٹنٹ کمشنر وانا نے مزید کہا کہ وانا اور آس پاس تمام انٹری پوینٹس پر کڑی نگرانی ہے بہت ہی بڑا سرچ اپریشن شروع ہے۔

اس سوال پر کہ ٹی بی ہپستال پر معمور خاصہ دار فورس کی روایتی کمپنی موقع پر موجود نہیں تھی یا کچھ مزاحمت نہیں کی ،انہوں نے جواب دیتے ہوئے کہا اس بارے ڈی پی او وانا بہتر طور پر معلومات دے سکتے ہیں لیکن ہم بھی اس چیز کو دیکھ رہے ہیں کہ وہاں سکیورٹی صورت حال کیا تھی۔ اسسٹنٹ کمشنر وانا امیر نواز خان نے کہا کہ ہم پُر اُمید ہیں کہ جلد بخیریت بازیابی ہوگی۔

Make Money with 1xBet
Show More
Back to top button